Marz Hai Ishq Ka by Isma Khan Complete Novel Free Pdf Download


Marz Hai Ishq Ka by Isma Khan Complete Online Urdu Novel in Pdf based on Haweli, Rude Hero & Innocent Heroine, Funny, Emotional Story Based, Magic On Hero and Revenge Based Urdu Novel Downloadable in Free Pdf Format and Online Urdu Novels Reading in Mobile Free Pdf Complete Posted on Novel Bank.

Isma Khan also written famous urdu novels Mujhe Dard Chahiye friendship and joint family story. Anokhi Khushi motivational based pdf novel. Panah novel based on cousin and funny novel download pdf.

Novel Bank website present a best urdu novels in different catagories like age difference based pdf novels, vani based free urdu novels pdf, cross cast based arrange marriage based urdu romantic novels free pdf download.

The website contains best romantic novels in urdu PDF form; the same goes for other genres.

This website is heaven for avid readers as they can not only download urdu novels in pdf but can easily read urdunovels online and top 10 urdu romantic novels.

The Urdu Novel Bank website contains the best layout and is relatively easy to use, even for an amateur. It has the best urdu novels collection, which include all the genres. Pdf free download novels.

اففف بہار۔۔ یہ کیسی خزاں آگئی ہے تمہاری زندگی میں۔۔ تم پڑھتی تھی تو نمبر نہیں آتے تھے، جاب کرتی تھی تومریض نہیں آتے تھے، گاؤں آگئی توسردار کی ماں فداہوگئی، فرسٹ نائٹ کھانا بھی ملا تو وہ بھی بلی الٹاگئی اور شوہر ڈرتا ہوا کمرے میں ہی نہیں آرہا۔

وہ منہ بناکر بولتی چکر لگارہی تھی کہ اپنے ہی لہنگے میں اٹک کر دھڑام سے زمین بوس ہوئی اسی وقت کمرے میں داخل ہوتا ہادی سر تھام کر رہ گیا۔

کمال ہے نا، جب کوئی چیز نہیں ملتی تو خود سے ہی ٹکرا کر گر جاتی ہو حالانکہ تمہارے فگر کے لحاظ سے یہ چیز کافی خطرناک ہے۔ وہ اس کو کہتا آگے بڑھا اور بیڈ پر بیٹھ کر اپنا ویسٹ کوٹ اتارنے لگا۔

بے مروت انسان مجھے اٹھائے گا کون، وہ ایک ٹانگ نیچے اور ایک گھٹنے کے بل اوپر کر کے بیٹھتی نتھنے پھلائے بولی۔

تم بڑا اعتکاف پہ بیٹھی ہو جو آکر اٹھاؤں، خود ہی اٹھ جاؤ کون سا میں نے گرایا ہے اور تمہارا روز کا مسئلہ ہے یہ، اگر روز روز اٹھانے لگ گیا تو میرے سِکس پیک ٹُو پیک بن جانے ہیں۔

وہ اپنی واچ اتارتا لاپرواہ انداز اپناتا طنز کرتا ہوا بولا اور بہار اسکے تیور دیکھتی سلگ کر رہ گئی۔

میں ناپسندیدہ ہی سہی لیکن تمہاری بیوی ہوں اورتم مذاق اڑا رہے ہومیرا، اب کی بار مزید شرم دلانی چاہی۔

تمہیں کس نے کہا کہ تم ناپسندیدہ ہو۔ وہ بھنوئیں سکیڑے اس کے پاس آیا اور اپنے سامنے گھٹنوں کے بل بیٹھ کر آنکھوں میں آنکھیں ڈالتا ہادی بہار کی جان نکالنے کے درپے ہو گیا۔


Or

Post a Comment

0 Comments