Shoq e Zawal by Eman Khan Complete Novel


شوقِ زوال ازقلم ایمان خان مکمل ناول۔ ریوینج بیسڈ اور آرمی بیسڈناول۔


مجھے ہاتھ مت لگاٸیے گا۔۔۔۔۔۔۔

اس کے کمرے میں داخل ہوتے ہی بیڈ پہ سمٹ پہ بیٹھی سترہ اٹھارہ سال کی لڑکی بدک کے پیچھے ہٹی۔۔۔۔۔۔

اس نے ماتھے پہ بل ڈال کے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔

”نٸ آٸی ہو کیا کوٹھے پہ۔۔۔۔۔۔۔“

اس نے وہی کھڑے ذرا نرمی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نہیں جانتی میں ادھر تک کس طرح پہنچی لیکن خدا کے لیے۔۔۔۔۔۔آپ مجھ سے دور رہیں۔۔۔۔۔۔

اس سترہ اٹھارہ سال کی لڑکی نے اس کے سامنے ہاتھ جوڑ دیۓ۔۔۔۔۔۔


بلکے آپ مجھے یہاں سے لے جاٸیں۔۔۔۔۔۔۔

وہ کچھ سوچ کے اس کے کندھے کے ساتھ لپٹ گٸ۔۔۔۔۔۔

اس نے اسے پیچھے ہٹانا چاہا لیکن وہ اس کے کندھے کے ساتھ لگ کے کھڑی ہو گٸ تھی۔۔۔۔۔۔۔

ہٹو پیچھے لڑکی ذیادہ دماغ خراب کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔۔۔۔۔۔

اس نے ذرا سختی سے اسے خود سے دور کیا 

وہ ڈبڈباٸی آنکھوں سے اسے دیکھ کے رہ گٸ۔۔۔۔۔

آپ مجھے یہاں سے لے جاٸیں میں اس جگہ نہیں رہنا چاہتی مجھے یہاں سے لے جاٸیں ۔۔۔۔۔۔۔میں یہاں سے نکلنے کے بعد آپ کی ہر بات مانوں گی۔۔۔۔۔۔

اس نے التجا کی تو اس نے ٹھہر کے ایک نظر اسے دیکھا۔۔۔۔۔

اور تیزی سے باہر نکل گیا

وہ مایوسی سے اسے دیکھ کے رہ گٸ۔۔۔۔۔۔

وہ کمرے سے نکلنے کے بعد سیدھا ستارہ باٸی کے کمرے میں گیا تھا۔۔۔۔۔۔

صاحب جی اتنی جلدی کیسے آگۓ آپ۔۔۔۔۔۔؟؟

اس نے پان تھوکتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔

وہ اوپر جو لڑکی ہے میں اسے خریدنا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔۔

اس نے ماتھے کو دونوں انگلیوں سے مسلتے۔۔۔۔۔۔سرسری کہا تو وہ منہ میں انگلی دبا کے اسے دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔

اتنی جلدی کیا جادو کر دیا اس نے صاحب جی۔۔۔۔۔۔

ستارہ باٸی نےکچھ راذداری سے پوچھا۔۔۔

بکواس نہیں کام کی بات۔۔۔۔۔۔کتنے میں دو گی۔۔۔۔۔۔

اس نے ذرا سرد لہجے میں کہا۔۔۔۔۔

تو وہ کھسیانی ہو گٸ۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ ابھی تک اندر بیٹھی رو رہی تھی۔۔۔۔۔۔ملازمہ کی دستک پہ اس نے سر اٹھایا

اٹھو لڑکی تیار ہو جاٶ تجھے کسی صاحب نے خرید لیا ہے۔۔۔۔۔۔۔

اس نے پھٹی پھٹی نظروں سے سامنے کھڑی لڑکی کو دیکھا

اسے اپنی سماعتوں پہ یقین نہیں آیا۔۔۔۔۔۔۔

 نیچے دئیے ہوئے بٹن سے اس ناول کا پی ڈی ایف ڈاوٴنلوڈ کریں۔

Post a Comment

1 Comments

Thanks for feedback